آل پارٹیز کانفرنس کی استعفوں کیلئے 7دن کی مہلت  - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

آل پارٹیز کانفرنس کی استعفوں کیلئے 7دن کی مہلت 


سانحہ ماڈل ٹاؤن پر ہونیوالی عوامی تحر یک پاکستان کی آل پارٹیز کانفر نس کے 10نکاتی مشتر کہ اعلامیہ میں حکومت کو مزید 7 دن کی مہلت دیتے ہوئے کہا ہے کہ نجفی کمیشن رپورٹ کی روشنی میں ذمہ داران کے خلاف کارروائی کی جائے ‘شہباز شریف اور رانا ثنا اللہ خان فوری استعفیٰ دیں ‘ عدالتی کمیشن نے وزیر اعلی اور وزیر قانون کو ذمہ دار ٹھہرا دیا ہے‘8 جنوری کو سٹیرنگ کمیٹی کا دوبارہ اجلاس ہو گااور اسی دن آئندہ کی حکمت عملی کا اعلان کیا جائیگا ‘شہدا کے ورثا 3 سال میں صرف جسٹس باقر نجفی کی رپورٹ حاصل کر سکے شہباز شریف و دیگر ملزمان کے برسر اقتدار رہتے ہوئے شفاف تحقیقات ممکن نہیں‘ 125 پولیس افسران کے سمن ہونے کے باوجود ایک بھی گرفتار نہیں کیا گیا جس سے واضح ہوتا ہے کہ حکومت انصاف کی فراہمی میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی. ماڈل ٹاؤن لاہور میں ہونیوالی آل پارٹیز کانفر نس کی صدارت ڈاکٹر طاہر القادری نے کی جبکہ اس موقعہ پر تحر یک انصاف کے شاہ محمودقر یشی ‘چوہدری محمدسرور ‘جہانگیر خان ترین اور میاں محمودالرشید ‘عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد ‘پیپلزپارٹی کے سردار لطیف خان کھوسہ ‘سینیٹر رحمن ملک ‘قمر الزمان کائرہ ‘جماعت اسلامی کے لیاقت بلوچ ‘فرید پراچہ ‘ایم کیوایم پاکستان کے ڈاکٹر فاروق ستار ‘پی ایس پی کے مصطفی کمال ‘مسلم کانفر نس کے سر براہ سردار عتیق احمد ‘سنی اتحاد کونسل کے سر براہ حامد رضا قادری ‘مجلس وحدت مسلمین کے سیکرٹری راجہ ناصر عباس ‘لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر چوہدری ذوالفقار ‘پاکستان بار کونسل کے وائس چےئر مین احسن بھون سمیت40سیاسی اور مذہبی جماعتوں کے قائدین سمیت دیگر بھی شریک ہوئے جبکہ کانفر نس کے اختتام پر تحر یک انصاف کے شاہ محمود قریشی اور پیپلزپارٹی کے قمر الزمان کائرہ نے مشتر کہ اعلامیہ پڑھا کر سنایا جس میں کہا گیا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن اور ختم نبوت کے قانون میں تبدیلی کی پرزور مذمت کرتے ہیں باقر نجفی رپورٹ میں شہباز شریف اور رانا ثنا اللہ کو ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے چنانچہ انہیں مستعفی ہونا ہو گا 8‘سانحہ ماڈل ٹان میں شہید اور زخمی ہونے والے پاکستان کے شہری تھے‘ انصاف کے حصول کیلئے جد و جہد کرنا تمام جماعتوں کی ذمہ داری ہے‘انصاف کی فراہمی نظام عدل اور قانون کی بالادستی کیلئے سنگ میل ثابت ہو گیآل پارٹیز کانفرنس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر طاہر القادری نے بتایا کہ کانفرنس آخری مرحلے میں داخل ہو گئی ہے.

ضرور پڑھیں: نومنتخب وزیرا عظم عمران خان کل صدر ممنون حسین سے عہدے کا حلف لیں گے

کانفرنس کی قائم کردہ کمیٹی نے ایک مشترکہ قرارداد تیار کی ہے جس پر تمام جماعتوں کے رہنماں نے دستخط کر دیئے ہیں ڈاکٹر طاہر القادری کے کہنے پر اے پی سی کی قرارداد کا پہلا صفحہ پی ٹی آئی کے شاہ محمود قریشی اور دوسرا صفحہ قمر الزمان کائرہ نے پڑھا.ماڈل ٹاؤن میں پنجاب پولیس نے جو بربریت کا مظاہرہ کیا وہ پوری قوم نے دیکھا اور اب بھی اکثر وبیشتر الیکٹرانک میڈیا پر دکھایا جاتا ہے

صبح سے دوپہر کے بعد علاقہ ظلم وبربریت کا شکار تھا خواتین کے پیٹوں اور منہ پر گولیاں ماری گئیں جبکہ سانحہ ایک روز قبل بلوچستان سے آئی جی ٹرانسفر وزیراعلیٰ پنجاب کے خصوصی طیارے میں انہیں لاہور لے جانا اسلام آباد اور پنجاب کے افسران کا اجلاس پھر پورا دن لاہور پولیس کی بربریت غنڈہ گردی کا شکار رہا گلوبٹ بھی کارروائی کرتے رہے پھر بھی وزیراعلیٰ پنجاب اور صوبائی وزیر قانون کا کہنا تھا کہ انہیں تو شام کو حقیقت معلوم ہوئی کہ کیا ہوا نجفی رپورٹ غائب کرنا کیا اس بات کے ثبوت نہیں کہ سب کچھ انکی مرضی اور ایما سے ہوا تھا پھر اب پنجاب کے صوبائی وزیر قانون کا قادیانیوں کو مسلم قرار دینا ن لیگ حکومت کی جانب سے قومی اسمبلی میں ختم نبوت قانون میں ترمیم ثبوت ہے کہ شریف خاندان اقتدار کی خاطر دین اسلام کو بھی نقصان پہنچانے کیلئے تیار ہے اور سانحہ ماڈل ٹاؤن بھی اسی منصوبے کا شاخسانہ تھا کہ ہم ملک دشین قوم کے خلاف جو چاہیں کریں ہٹلر کی تاریخ دھرائیں سب کو خاموش اور تابع رہنا ہوگا یہ بھی حقیقت ہے کہ کم از کم پاکستان میں ممکن نہیں کہ کوئی سیٹ پر وہ بھی اقتدار کی سیٹ پر ہو اور اسکے خلاف کارروائی ہو .
 

..

ضرور پڑھیں: تبدیلی آ گئی ۔۔۔ ڈیسکون کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر عبد الرزاق داؤد کابینہ میں شامل ہونے کے لیے اپنی ہی کمپنی سے مستعفی

مزید خبریں :