انگوٹھے کو ہاتھ لگاکر آپ پتہ لگاسکتے ہیں کہ آپ کو دل کی بیماری لاحق ہونے کے کتنے امکانات ہیں - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

انگوٹھے کو ہاتھ لگاکر آپ پتہ لگاسکتے ہیں کہ آپ کو دل کی بیماری لاحق ہونے کے کتنے امکانات ہیں


اسلام آباد (قدرت روزنامہ) یہ تو آپ سب جانتے ہی ہوں گے کہ عمر گزرنے کے ساتھ ہماری شریانوں میں تناؤ آتا جاتا ہے اور اگریہ تناؤ بڑھتا رہے تو دل کی بیماریوں کے امکانات بڑھنے لگتے ہیں.Heart and Circulatory Physiologyمیں شائع ہونے والی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ آپ گھر بیٹھے ہی اس بات کا پتا لگاسکتے ہیں کہ آ پ کادل کیسے کام کررہا ہے اور آپ کودل کی بیماری لاحق ہوئی ہے یا نہیں. آپ کو چاہیے کہ زمین پر چِت بیٹھ جائیں اور اپنے ہاتھوں سے پاؤں کے انگوٹھے کو ہاتھ لگائیں،اگر آپ کا ہاتھ پاؤں کے انگوٹھے کو چھوئے تو اس کا مطلب ہے کہ

آپ کا دل اور شریانیں بہتر طریقے سے کام کررہے ہیں. یونیورسٹی آف نارتھ ٹیکساس اور جاپانی یونیورسٹیوں کے اشتراک سے کی گئی تحقیق میں 20سے83سال کے درمیان 526لوگوں کا مطالعہ کیا گیا.تحقیق کاروں نے ان لوگوں کو دو گروہوں میں تقسیم کرتے ہوئے یہ دیکھا کہ کن لوگوں کی شریانوں میں لچک ہے اور کن لوگوں کی شریانوں میں کھچاؤ ہے. تحقیق کار کینٹا یاماموٹا کا کہنا ہے کہ کھلی شریانوں کی وجہ سے خون بآسانی گردش کرپاتا ہے اور اگر شریانیں تنگ ہوں گی تو خون صحیح طرح گردش نہیں کرپائے گا.اس کا کہنا تھا کہ اگر شریانیں تنگ ہوں اور آپ کو

کھچاؤ محسوس ہوتو اس کا یہ مطلب نہیں کہ آپ کو ہارٹ اٹیک ہوگا لیکن دل کی بیماری لاحق ہونے کو رد نہیں کیا جاسکتا. اس کا کہنا ہے کہ عمر ڈھلنے کے ساتھ شریانوں میں تناؤ آجاتا ہے لہذا ضروری ہے کہ احتیاط برتی جائے.اگر شریانوں میں تناؤ کم ہوگا تو دل کی بیماری کے امکانات بھی کم ہوں گے اور آپ ایک صحت مندزندگی گزار سکیں گے.ہمارا فیس بک پیج ضرور لائیک کریں

..

مزید خبریں :

سروے