پیشاب کی رنگت
Can't connect right now! retry

پیشاب کی رنگت

اسلام آباد(قدرت روزنامہ) کیاآپ کو معلوم ہے کہ پیشاب کی رنگت آپ کی صحت کے بارے میں کافی کچھ بتاسکتی ہے؟ جی ہاں مختلف کھانے اور ادویات پیشاب کی رنگت کو بدل سکتے ہیں جبکہ ایسا قدرتی طور پر ہونے کی صورت میں ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہئے.عام طور پر پیشاب معمولی سا زرد ہو تو اس سے پتا چلتا ہے کہ آپ صحت مند ہیں اور جسم کو مناسب مقدار میں پانی مل رہا ہے.

اسی طرح وہ بے رنگ یا بالکل پانی کی طرح شفاف ہو تو اس کا مطلب ہے کہ آپ نے کافی زیادہ پانی پی رکھا ہے. اگر پیشاب کی رنگ کافی حد تک زرد ہو تو یہ بھی نارمل ہونے کی علامت ہے تاہم اگر وہ کچھ زیادہ زرد رنگ کا ہو تو اس کا مطلب ہے کہ آپ صحت

مند تو ہیں مگر جسم میں پانی ہیں مگر جسم میں پانی کی کمی ہورہی ہے اور آپ کو پانی پی لینا چاہئے.اسی طرح اگر اس کی رنگت شہد جیسی ہو تو یہ واضح طور پر ڈی ہائیڈریشن کی نشانی ہے جس کا علاج پانی کے زیادہ استعمال سے ہی ممکن ہے. اگر پیشاب کی رنگت بھوری ہو تو یہ جسم میں بہت زیادہ پانی کی کمی ہوسکتی ہے تاہم مناسب پانی پینے کے بعد بھی رنگت میں تبدیلی نہ آئے تو یہ جگر کے امراض جیسے ہیپاٹائٹس اور دیگر کی علامت ہوسکتی ہے، ایسی صورت میں فوری طور پر ڈاکٹر سے رجوع کیا جانا چاہئے.اگر اس کی رنگت گلابی یا سرخ ہے تو اس کی وجہ حال ہی میں چقندر، بیریز وغیرہ کھانا ہوسکتی ہے، تاہم اگر آپ نے

ایسا کچھ نہیں کھایا تو یہ خون ہے جو ہوسکتا ہے کہ کسی بیماری کا باعث نہ ہو مگر گردوں کے امراض، رسولی، پیشاب کی نالی میں انفیکشن یا مثانے کے امراض کی علامت ہوسکتے ہیں، تو پہلی فرصت میں ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہئے.اگر پیشاب کی رنگت نیلی یا سبز ہوجائے تو ایسا اکثر فوڈ کلر کی وجہ سے ہوتا ہے جو کچھ ادویات میں استعمال ہوتا ہے. اگر پیشاب جھاگ دار ہورہا ہے تو یہ بہت زیادہ مقدار میں پروٹین لینے کا نتیجہ ہوسکتا ہے کیونکہ یہ جسم میں ذکیر نہیں ہوپاتا اور گردے انہیں پیشاب کے ذریعے خارج کردیں، تاہم اگر یہ بدترین ہوجائے تو یہ بھی گردوں کی امراض کی علامت ہوسکتے ہیں. نوٹ: یہ مضمون عام معلومات کے لیے ہے. قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ لیں 

..