عبدالقدوس بزنجو کی حکومت کے عوام دوست متحرک اور فعال اقدامات خوش آئند مگر حیران کن - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

عبدالقدوس بزنجو کی حکومت کے عوام دوست متحرک اور فعال اقدامات خوش آئند مگر حیران کن


اقتدار سنبھالتے ہی کوئٹہ شہر کے دیرینہ اہم مسئلہ گندے پانی سے کاشت ہونیوالی سبزیوں کا نوٹس لے کر کاشکاری بند کرائی وسبزیاں تلف کرائیں
این ٹی ایس ٹیسٹ پاس ہونیوالے اور معذور افراد کو ملازمتیں دلانے کیلئے فوری اقدمات اٹھائے ،جناح روڈ کی تعمیر کا کام انتہائی قلیل عرصہ میں مکمل کرایا
گوادر میں پانی کی عد م دستیابی کا نوٹس لیا ، انکی اس بات سے اہل بلوچستان سمیت ملک بھر کے عوام نے اتفاق کیا کہ مقامی لوگوں کے تحفظات دور کئے بغیر ترقی ممکن نہیں
کھلی کچہریوں میں عوام کے مسائل سن کرحل کرنے کے احکامات دیئے یہ درست ہے کہ انکی آواز ملک میں موجودہ نظام کو تو شاہد نہ بدل سکے لیکن عوام اور جمہوری کلچر کا نقطہ آغاز ضرور ثابت ہوگی
کوئٹہ(اسٹاف رپورٹر)13 جنوری 2018 کو میر عبدالقدوس بزنجو نے بلوچستان کے 16 ویں وزیراعلیٰ کے طور پر اپنے عہدے کا حلف اٹھایاتو عام خیال تھا کہ چندمہینوں کی حکومت ملنے جلنے اور رسمی ملاقاتوں اور اجلاسوں کے بعد ختم ہوجائے گی. ظاہر ہے جہاں پانچ سال کی مدت پوری کرنے والی حکومتوں کی کارکردگی نہ ہونے کے برابر ہوتی ہو وہاں چند مہینوں کی حکومت سے کیا توقعات وابستہ کی جاسکتی ہیں.

ضرور پڑھیں: جسم فروشی کے مکروہ دھندے میں کمسن لڑکیوں کو جلد از جلد جوان کرنے کے لیے ان دنوں کس قسم کی ادویات اور ہتھکنڈے استعمال کیے جا رہے ہیں ؟ بی بی سی کی خصوصی رپورٹ نے تہلکہ مچا دیا

لیکن میر عبدالقدوس بزنجو اوران کی حکومت نے چند دنوں میں اپنے عوام دوست متحرک اورفعال اقدامات کے ذریعہ عوام کے دلوں میں امید اور حوصلے کی جو شمع روشن کی ہے وہ خوش آئند بھی ہے اور حیران کن بھی . جدید جمہوریت کے مطابق جمہوریت وہ نظام ہے جس میں حکومت عوام میں سے ہوتی ہے عوام کی ہوتی ہے اور عوام ہی کیلئے ہوتی ہے. کئی دوسرے ملکوں کی طرح پاکستان کے عوام نے ان سنہری اصولوں کا کبھی عملی مشاہدہ نہیں کیا .ہمارے عوام کا تجربہ ہے کہ ہماری ڈھانچہ جاتی جمہوریت سے جمہورکوہمیشہ باہر رکھا گیا ہے. روایتی سیاسی جماعتوں کی قیادت عام طور پر طبقہ اشرافیہ سے تعلق رکھتی ہے. قومی اور صوبائی اسمبلیوں میں بھی انہی کی اکثریت ہے. اگر بھولابھٹکا کوئی متوسط طبقے کا شخص حکمرانوں کی فہرست میں شامل بھی ہوا تو ہر کہ درکان نمک نمک شدکے مصداق انہی کی بولی بولتارہا. وزیر اعلیٰ بلوچستان میرعبدالقدوس بزنجو پہلے وزیر اعلیٰ ہیں جنہوں نے عوام کے درمیان جاکر دو ٹوک اعلان کیا ہے کہ ’’عوام کے درمیان جانا ان کے مسائل سننا اورانہیں حل کرنا ہی اصل حکمرانی ہے‘‘.وزیر اعلیٰ بلوچستان نیک خیالات کے اظہار اورروشن اعلانات تک محدودنہیں. ان کی محترک قیادت عام آدمی سے مسلسل رابطے اور دن رات محنت ان عزم راسخ عوام کے ساتھ تعلق اورانکی کمیٹمنٹ کا مظہر ہے.حقیقت یہ ہے کہ میر عبدالقدوس بزنجو جب سے وزیر اعلیٰ منتخب ہوئے ہیں انہوں نے عام آدمی سے رابطہ کرنے انکے مسائل اور مشکلات براہ راست معلوم کرنے اور ان کے فوری حل کیلئے دن رات جس سرگرمی کا مظاہرہ کیاہے وہ بلوچستان کے عوام کیلئے حیران کن ضرور لیکن فرحت بخش بھی ہے.وزیرا علیٰ نے اقتدار سنبھالنے کے فوراً بعد صوبائی دار الحکومت کے مختلف علاقوں کے اچانک دورے کئے اورکسی پروٹوکول کے بغیر شہر کے حالات کا از خود معائنہ کیا. اور صورتحال کی درستی کے لئے احکامات جاری کیئے بلکہ ان احکامات پر عملدرآمد ہوتانظر بھی آیا. وزیر اعلیٰ نے کوئٹہ کے شہریوں کے ایک دیرینہ اور اہم مسئلہ کاپہلی بارسنجیدگی سے نوٹس لیا . ایک طویل عرصہ سے گندے پانی سے سبزیوں اور دیگر فصلات کی کاشت جاری تھی. جبکہ ڈاکٹر حضرات بارہا کہتے رہے کہ گندے پانی سے کاشت کی گئی سبز ی کے استعمال سے عوام میں مہلک بیماریاں پھیل رہی ہیں. لیکن کسی نے توجہ نہیں دی. وزیر اعلیٰ میر عبدالقدوس بزنجو نے فوری طورپرگندے پانی کی تیارکردہ سبزی اوردیگر فصلات کوتلف کرکے اس سلسلے کو بندکیا گیا اور ساتھ ہی انہوں نے دو ٹریٹمنٹ پلانٹس کوفعال کرنے کے احکامات جاری کیئے. علاوہ ازیں این ٹی ایس ٹیسٹ پاس کرنے والے امیدواروں کو عدالت کے فیصلے کے باوجود ملازمت نہیں مل رہی تھی وزیراعلیٰ نے ان امیدواروں کو ملازمتیں فراہم کرنیکا اعلان کیا. معذورافرادایک عرصہ سے اپنے مطالبے تسلیم کروانے کیلئے احتجاج کررہے تھے لیکن انکی شنوائی نہیں ہورہی تھی وزیراعلیٰ میر عبدالقدوس بزنجو نے معذور افرادکی فہرست تیارکرکے خصوصی کارڈکے ذریعے وظیفے دینے اور ان کے دیگر مسائل حل کرنے کا اعلان کیا. مین جناح روڈکی تعمیر کاکام انتہائی قلیل عرصے میں تیزی سے مکمل ہورہا ہے. انہوں نے کوئٹہ اور گوادر دونوں جگہ کھلی کچہری منعقد کی اورلوگوں سے انکے مسائل معلوم کیئے اورجس حد تک ممکن تھا مسائل کے حل کیلئے فوری احکامات جاری کیئے

.وزیر اعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے کوئٹہ کے علاوہ صوبے کے نہایت اہم اور حساس ساحلی شہر گوادر کا بھی دورہ کیا اور اس دورے کے دوران بھی انہوں نے گوادر اور اسکے عوام کی فلاح و بہبود کیلئے جس جرائت اور عوام دوست رویہ کا مظاہرہ کیا وہ باعث حوصلہ ہے. اس میں شبہ نہیں کہ بین الاقوامی صورتحال میں تبدیلیوں، سابق سوویت یونین کے منبدم ہوجانے اور توازن قوت کی مغرب سے مشرق کومنتقلی آج کے ناقابل تروید حقائق ہیں جن کے نمایاں ہونے سے بلوچستان کے ساحلی علاقوں اور خاص طور سے گوادر کی اسٹریٹیجک اہمیت میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے. اورنئے حالات میں دنیابھرکی توجہ توانائی کی راہداری اور وسط ایشیا کے دروازے پرمرکوز ہو ئی ہے. ترقی کے عمل سے کوئی انکار نہیں لیکن گوادر اور اسکی پرکشش اہمیت سے فائدہ اٹھانے والوں کو ترقی کے پورے عمل سے مقامی آبادی کومحروم رکھنے کاکوئی حق حاصل نہیں. وزیر اعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو کی یہ بات قطعی جائزاور متعلق ہے کہ مقامی لوگوں کے تحفظات دور کیئے بغیر ترقی کا خواب پورانہیں ہوسکتا. اب سے پہلے حکمران طبقے کے مختلف دھڑوں نے ترقی کے عمل کو صرف ایک سیاسی مسئلے کے طورپر دیکھا تھا اوراپنے اپنے سیاسی مفادات کے مطابق نعرہ بازی کو اہمیت دی تھی. لیکن عوام کی اپنی صفوں سے نکل کر وزارت اعلیٰ کے منصب پرپہنچنے والے میرعبدالقدوس بزنجو نے تمام معاملات کوصرف عوام کے مفاد میں اورانہی کی عینک سے دیکھناشروع کیاہے. وہ پہلے وزیراعلیٰ ہیں جنہوں نے گودار کا دورہ کیا تو اسے سرکاری تقریبات پر نعشیں دعوتوں اورلفاظی پرمبنی بریفنگ تک محددو نہ رکھابلکہ تمام پروٹوکول کوچھوڑ کر وہ گوادر کے شہریوں کے درمیان پہنچے گئے ان سے بلاتکلف ملاقا ت کی. کھلی کچہری میں ان سے مسائل معلوم کیئے . بعض درخواستوں پر موقع پر احکامات جاری کیئے.پرانے گوادر شہر کی واحد سڑک کی تعمیر کا اعلان کیا. انہوں نے گوادر کے شہریوں کویقین دلایاکہ ترقی کے عمل سے گوادر کے عوام کے بنیادی حقوق متاثرنہیں ہونے دیں گے. وزیرا علیٰ نے واشگاف انداز میں اعلان کیا کہ مقامی آبادی کے حقوق کے تحفظ کے لئے موثر قانون سازی کی جائے گی. گوادر میں قیام کے دوران وزیر اعلیٰ نے فری زون اور انٹر نیشنل ایکسپو کی افتتاحی تقریبات میں بھی شرکت کی اوریہاں وزیر اعظم پاکستان شاہدخاقان عباسی اور وفاقی حکومت کی اہم شخصیات کی موجودگی میں بھی وزیر اعلیٰ بلوچستان نے ترقی کے جاری عمل کے حوالے سے اہلیان بلوچستان کے تحفظات کا کھل کر اظہارکیا اور دو ٹوک اعلان کیا کہ ان کی حکومت ترقی کے عمل میں بھر پور تعاون کرنے کے ساتھ ساتھ بلوچستان اور خاص طور سے گوادر کے عوام کے بنیادی حقوق اور مفادات کے تحفظ کوہر صورت یقینی بنائے گی. عوام کے نقطہ نظر سے وزیر اعلیٰ بلوچستان کادورہ گوادر نہایت کامیاب اور تاریخی نوعیت کا حامل تھا جبکہ گوادر کے عوام نے پہلی بار حقیقی جمہوری طرز حکمرانی کا مشاہدہ کیا جس میں چیف ایگزیکٹو عوام کے درمیان جاکران کے مسائل معلوم کرتاہے اور انکے حل کیلئے اقدامات کرتاہے جو سب کو نظر آتے ہیں.وزیراعلیٰ خروٹ آباد کوئٹہ کی بچی فرح بی بی کی بیماری اور اس کے والدین کی غربت کا نوٹس لیتے ہوئے سرکاری خرچ پر بچی کے علاج کا اعلان کیا جو غلط انجکشن لگنے کے باعث پانچ سال سے سننے اوربولنے کی صلاحیت سے محروم ہے.یہ درست ہے کہ وزیراعلیٰ میر عبدالقدوس بزنجو کی واحد آواز ملک میں موجودہ نظام کوتو شایدنہ بدل سکے لیکن عوامی اورجمہوری کلچر کانقطہ آغاز ضرور ثابت ہوسکتی ہے. 
 

..

ضرور پڑھیں: حکومت بنانے کیلئے(ن)لیگ اور پیپلز پارٹی سے ہاتھ ملایا تو سالوں پر محیط جدوجہد کا مقصد فوت ہو جائیگا،عمران خان نے واضح اعلان کردیا

مزید خبریں :