گرینڈ اپوزیشن الائنس مقصد احتساب سے نجات ،مفادات کا حصول  - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

گرینڈ اپوزیشن الائنس مقصد احتساب سے نجات ،مفادات کا حصول 


گرینڈ اپوزیشن الائنس نے وزارت عظمیٰ،سپیکر و ڈپٹی سپیکر کیلئے متفقہ امیدوار لانے کااعلان کر دیا ہے.وزارت عظمیٰ کا امیدوار مسلم لیگ(ن)،سپیکرکا امیدوار پیپلز پارٹی اور ڈپٹی اسپیکر کیلئے متحدہ مجلس عمل(ایم ایم اے) کا امیدوار ہوگا.

ضرور پڑھیں: کہاں سورج چمکے گا اور کہاں بارشیں ہو ں گی؟ محکمہ موسمیات نے شہریوں کیلئے اہم پیشگوئی کر دی

گرینڈ اپوزیشن الائنس نے وزیر اعظم ،سپیکر و ڈپٹی سپیکر کے انتخاب کیلئے لائحہ عمل طے کرنے کیلئے 16رکنی مشترکہ ورکنگ کمیٹی بھی تشکیل دیدی،ہم خیال جماعتوں کے رہنماؤں نے انتخابات کے نتائج کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہیکہ تمام جمہوری پارٹیوں کے درمیان اتحاد ہوگیا ہے، تمام جماعتیں پارلیمنٹ میں جائیں گی، پی ٹی آئی کو بتائیں گے کہ حقیقی اپوزیشن کیا ہوتی ہے،دھاندلی کیخلافپارلیمنٹ کے اندر اور باہر احتجاج کیا جائے گا، مضبوط اورمربوط اپوزیشن کا کردار ادا کریں گے، ہم اپوزیشن کے طور پر مقابلہ نہیں کرنے جارہے بلکہ ہم حکومت بنانے کی پوزیشن میں ہیں،ایوان میں کٹھ پتلی حکمران جماعت کا مقابلہ کیا جائے گا،ایوان کے اندر اور باہر احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے،اپوزیشن آئین و جمہوریت کی حفاظت کرے گی. تمام اپوزیشن جماعتیں اس بات پر متفق ہیں، حالیہ الیکشن غیر منصفانہ، غیر شفاف اور دھاندلی زدہ تھے، ہر سیاسی جماعت نے الیکشن کمیشن میں پیش ہو کر دھاندلی کے ثبوت پیش کئے، اب اپوزیشن مشترکہ طور پر دھاندلی کے وائٹ پیپر شائع کرے گی، اپوزیشن جماعتوں نے جعلی الیکشن کو مسترد کردیا ہے،نادرا نے اعتراف کرلیا ہے کہ آر ٹی ایس سسٹم خراب نہیں ہوا، نادرا نے کہا ہے کہ اسے بند کیا گیا ہے غلطی نہیں ہوئی،الیکشن میں دھاندلی ہوئی، یہ الیکشن نہیں سلیکشن تھا، اے پی سی میں تمام سیاسی جماعتوں کا موقف تھا کہ غیر جانبدارانہ الیکشن نہیں ہوئے، اس کے نتائج ہمیں منظور نہیں ہیں. اپوزیشن پارلیمنٹ میں مضبوط اپوزیشن کا کردار ادا کریں گے، الیکشن کمیشن اور نگراں حکومت آئین اور قانون کے تحت انتخاب نہیں کراسکی، ہارنے والوں کوپتہ نہیں انھیں کیوں ہرایا ہے. پہلی بار ہوا الیکشن کے بعد اکثر جماعتوں نے نتائج مسترد کیے، کٹھ پتلی گٹھ جوڑ کو شکست دینے کی کوشش کریں گے، ہم خیال جماعتوں نے تمام حل طلب معاملات پر اتفاق رائے کرلیا ہے.اس وقت جیتنے والے بھی شرمسارہیں اور ہارنے والے پریشان، اپوزیشن آئین و جمہوریت کی حفاظت کرے گی تمام بڑی جماعتیں ایک ہفتے میں متحد ہو کر انتخابات کے نتائج کو مسترد کررہی ہیں،کٹھ پتلی گٹھ جوڑ کو شکست دیں گے،اپوزیشن فیڈریشن کی اساس ہے، الیکشن میں بے قاعدگیاں اور دھاندلی ہوئی ہے جس کے خلاف تمام اپوزیشن جماعتیں مل کر جدوجہد کریں گی، اے پی سی کے اندر تمام سیاسی جماعتوں نے مل کر فیصلہ کیا ہے کہ پارلیمنٹ کے اندر اور باہر بھرپور کردار ادا کیا جائے گا.پاکستان کی سیاسی جماعتوں ،سیاستدانوں کا کردار تو گذشتہ 7سال سے ہی پاکستانی عوام اور دنیا کے سامنے ہیں لیکن حالیہ انتخابات کے بعد تو اور کھل کر سامنے آگیا ہے اگر شہباز شریف کے زرداری اور آصف زرداری کے شہباز شریف مولانا فضل الرحمان کے مرحوم بھٹو اسی طرح پیپلز پارٹی کے مولانا فضل الرحمان عمران خان کے چوہدری برادران اور چوہدری برادران کے عمران خان تمام سیاسی جماعتوں کے ایم کیو ایم اور متحدہ کے دوسروں پر توہین آمیز الزامات کا جائزہ لیا جائے اور آج حصول اقتدار کیلئے انکے ایک دوسرے کے ساتھ اتحاد کا سنجیدگی سے جائزہ لیا جائے تو ان کا کردار تو قوم پر واضح ہوہی جائے گا اور قوم کا کردار بھی سامنے ضرور آئے گا جو انہیں ووٹ دیتی انکی حمایت کرتی ہے غیرضیکہہ ہمارے سیاستدان ،سیاسی جماعتوں کا کردار پوری پاکستانی قوم کیلئے باعث شرم ہے اور قوم ان سے اچھائی کی توقع رکھتی ہے تو احمقانہ سوچ ہے یہ واضح ثبوت ہے کہ ہمارے سیاستدانوں کو ملک وقوم نہیں صرف اور صرف اقتداور اور ذاتی مفادات عزیز ہیں ...

ضرور پڑھیں: علیم خان ، یاسر راجہ اور یاسمین راشد کی چھٹی! وزارت اعلیٰ پنجاب کیلئے تحریک انصاف کا مضبوط ترین امیدوار سامنے آگیا

مزید خبریں :