ترجمان پاک فوج کیا نتخابات ،سیاسی جماعتوں کے جھوٹے پروپیگنڈے کی وضاحت  - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

ترجمان پاک فوج کیا نتخابات ،سیاسی جماعتوں کے جھوٹے پروپیگنڈے کی وضاحت 


ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے واضح کیا ہے کہ افواج پاکستان کا انتخابات میں براہ راست کوئی تعلق نہیں ٗفوج الیکشن کے عمل کو غیر سیاسی غیر جانبدار ہوکر ادا کریگی ٗفوج کو انتخابی عمل میں بے ضابطگی خود دور کرنے کا اختیار نہیں تاہم اگر فوجی اہلکاروں نے کسی جگہ بے ضابطگی نوٹ کی تو ان کا کام الیکشن کمیشن کو آگاہ کرنا ہے ٗ25 جولائی کو عوام اپنا حق اداکرینگے اور ملک کو جمہوری نظام کی طرف لیکر جائینگے ٗ پاکستان اور جمہوریت دشمن عناصر الیکشن سے خوش نہیں ہے لیکن انتخابات اپنی تاریخ پر ہی ہوں گے ٗیہ تاثر غلط ہے کہ کوئی جونیئر افسر کسی کو بلا کر کہے کہ انتخابات کا انعقاد اس طریقے سے ہوگا ٗکچھ لوگوں کا مقصد ہے کہ افواج پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف جنگ سے دور کرکے عام نوعیت کے مسائل میں گھسیٹا جائے ٗجیپ ہماری نہیں ٗ انتخابی نشان الاٹ کرنا افواج پاکستان کا نہیں الیکشن کمیشن کا کام ہے، میڈیا ہر چیز کو شک کی نظر سے نہ دیکھے ٗعوام جیسے ووٹ دیتے ہیں اس کے مطابق نتیجہ ہونا چاہیے ٗ کیپٹن (ر) صفدر کو سول عدالت سے سزا ہوئی ہے جب وقت آئے گا تو آرمی کے رولز کے تحت ان کے خلاف کارروائی کی جائیگی ٗسوشل میڈیا کو ہم کنٹرول نہیں کرسکتے ٗ اگر کوئی ایسا کام ہو جو ملک کے خلاف ہو تو اسے نظر انداز نہیں کیا جائیگا ٗہم خدا کی مخلوق ہیں ٗ پاکستان کے عوام کیلئے اپنی جان کا نظرانہ پیش کرکے فرائض انجام دیں گے ٗعوام انتخابات میں کسے بھی منتخب کریں، ہمارے لیے وہی وزیر اعظم ہوں گے ٗ فوج کا اس معاملے میں کوئی عمل دخل نہیں ہوگا. پریس کانفرنس میں سوال ہوتا رہا کہ انتخابات ہوں گے یا نہیں اور اس حوالے سے شکوک و شہبات کا اظہار ہوتا رہا تاہم وقت کے ساتھ ساتھ تمام شکوک و شہبات نے دم توڑدیا ہے اور اللہ کا شکر ہے کہ پاکستان ایک بار پھر الیکشن کی طرف جارہا ہے .

ضرور پڑھیں: پی ٹی آئی چئیرمین عمران خان کو معذور خاتون نے روک لیا

انہوں نے کہا کہ یہ تیسرا الیکشن ہے جو پاکستان میں جمہوری نظام کو جاری رکھے گا، خوشی کی بات ہے کہ پاکستان عوام اور سیاسی جماعتیں اس عمل کو کامیابی سے آگے لیکر جارہی ہیں اور 25 جولائی کو عوام اپنا حق اداکرے گی اور ملک کو جمہوری نظام کی طرف لیکر جائی گی. 2018 کے انتخابات میں فوج پہلی بارتعینات نہیں ہو رہی ہے ٗ1997 کے انتخابات میں 35 ہزار پولنگ اسٹیشن پر ایک لاکھ 92 ہزار فوجی اہلکار تعینات کیے گئے تھے

اور 2008 کے الیکشن میں کوئیک ایکشن فورس نے ڈیوٹی دی. انہوں نے کہا کہ انتخاب کے دن ووٹر کسی بھی دباؤ کے بغیر اپنا ووٹ کاسٹ کریں.میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ صاف اور شفاف انتخابات کا مطلب ہے کہ الیکشن کمیشن نے جو ضابطہ اخلاق دیا ہے اس پر مکمل طور پر عمل کرنا اور 2018 کے انتخابات کے تناظر میں الیکشن کمیشن نے فوج سے صاف اور شفاف الیکشن کے انعقاد میں مدد مانگی ہے. انہوں نے واضح کیا کہ فوج الیکشن کے عمل کو غیر سیاسی غیر جانبدار ہوکر ادا کریگی.انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے ہمیں 6 کام دئیے ہیں، اس میں سب سے پہلے امن و امان کو بہتر کیا جائے، دوسرا بیلٹ پیپرز کی چھپائی کے دوران سیکیورٹی کے فرائض انجام دینا، اس کے علاوہ انتخابی سامان کی ترسیل کرنا ہے، پولنگ اسٹاف اور ریٹرننگ افسران کی سیکیورٹی ہے.انہوں نے کہا کہ پولنگ والے دن پولنگ اسٹیشنز پر سیکیورٹی فراہم کرنا افواج پاکستان کی ذمہ داری ہے.ہم نے وہ سب کچھ برداشت کیا جو عام حالات میں برداشت نہیں کرسکتے، کچھ لوگوں کا مقصد ہے کہ افواج پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف جنگ سے دور کرکے عام نوعیت کے مسائل میں گھسیٹا جائے. اگر کوئی شخص سیاسی جماعت تبدیل کرتا ہے تو یہ پہلی مرتبہ نہیں ہوا اور یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ کوئی کال کرے کہ ایسا کردیں تو ایسا ہوجائیگا.یہ سب افواج پاکستان پر الزامات ہیں لیکن ہم پھر بھی خاموش ہیں کیونکہ ہمیں پتہ ہے کہ ہم نے کہا جانا ہے.پاک فوج کے ترجمان نے سیاسی جماعتوں کے پروپیگنڈے کہ انجینئر ڈ انتخابات کرائے جارہے ہیں ودیگر الزامات کے دو ٹوک واضح جوابات دے دیئے ہیں اب سیاسی جماعتوں کا فرض ہے کہ وہ بے مقصد جھوٹا اور منافقانہ پروپیگنڈہ بند کرکے الیکشن پر توجہ دیں اور ہار جیت کے بعد الزام تراشیوں کی بجائے گریبان میں جھانک کر اپنی کارکردگی پر غور اور احتساب کریں .
 

..

ضرور پڑھیں: فوج اور پولیس کے اہلکار پریزائڈنگ افسر کی ہدایات پر عمل اور رپورٹ کریں گے :سیکریٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب