عمران خان کے دعوے اور وعدے ،قوم عملدرآمد کی منتظر  - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

عمران خان کے دعوے اور وعدے ،قوم عملدرآمد کی منتظر 


عام انتخابات میں واضح کامیابی حاصل کرنے کے بعد پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ 22سال پہلے جو محنت شروع کی آج اللہ نے اس مقام پر پہنچادیا، مینڈیٹ ملنے پر اللہ کا شکر ادا کرتے ہوئے کہا ہے کہ نئے پاکستان کا خواب پورا کرنے کا موقع ملا ، ہم اپنا جمہوری عمل بڑھتے دیکھ رہے ہیں ، کرپشن کی وجہ سے ملک کو اوپر سے نیچے آتا ہوا دیکھا، ایسا پاکستان چاہتاہوں جہاں کمزورطبقے کو سہولتیں ملیں،سیاسی مخالفین کیخلاف کسی بھی قسم کی انتقامی کارروائی نہیں ہو گی، دھاندلی کی شکایات کرنے والی جماعتیں جس حلقے کو کہیں گی وہی حلقے کھولے جائیں گے،وعدہ کرتا ہوں کہ عوام کے ٹیکس کے پیسے کی حفاظت کروں گا،نوجوانوں کو نوکریاں دینگے ، ہم سادگی اپنائیں گے اور تمام گورنر ہاؤسز عوام کے لیے استعمال کیے جائیں گے ، وہ خود بھی وزیراعظم ہاؤس کی بجائے منسٹر انکلیو میں رہیں گے ، فیصلہ کرینگے وزیر اعظم کو تعلیمی مقاصد کیلئے استعمال کیا جائے ،بھارت کے ساتھ سب سے بڑا مسئلہ کشمیر کا ہے ، کوشش ہونی چاہیے اس کا حل میز پر بیٹھ کر نکالا جائے ، ہم تعلقات کو بہتر کرنے کیلئے تیار ہیں ، آپ ایک قدم بڑھائیں گے تو ہم آپ کی طرف دو قدم بڑھائیں گے ،ہمارے تعلقات اچھے ہوتے ہیں تو یہ پورے برصغیر کیلئے اچھاہے ، ہم ایک دوسرے سے تجار ت کریں ، اس میں دونوں ملکوں کا فائدہ ہے. اللہ نے انہیں موقع فراہم کیا ہے وہ اپنے خواب کو پورا کر سکیں، پہلا مرحلہ مکمل ہوچکا ہے تاہم اب دوسرے مرحلے میں اپنے منشور پر عمل درآمد کریں گے

.

ضرور پڑھیں: ’’مجھے اب ڈرلگتا ہے کہ ۔ ۔ ۔‘‘ معروف اداکارہ ریشم نے شادی سے ہی انکار کردیا ، وجہ ایسی کہ آپ کو بھی شدید دکھ ہوگا

پی ٹی آئی چیئرمین کا کہنا تھا کہ میں نے خود اس ملک کو ترقی کرتا اور نیچے آتے دیکھا، لہذا میں چاہتا تھا کہ پاکستان ایسا ملک بنے جیسا قائد اعظم محمد علی جناح نے سوچا تھا. بلوچستان کے عوام نے جمہوریت کو مضبوط کیا، تاہم میں کامیاب الیکشن کے انعقاد پر سیکیورٹی فورسز کو بھی داد دینا چاہتا ہوں. میں خلفائے راشدین کے وقت جیسا نظامِ حکومت چاہتا ہوں.یہ انتخابات تاریخی تھے، اس میں لوگوں نے قربانیاں دیں، اس میں دہشت گردی ہوئی، جس طرح بلوچستان میں دہشت گردی ہوئی اس کے باوجود وہاں کے عوام کی جانب سے ووٹ ڈالنے کے لیے نکلنا قابل فخر ہے. تمام پاکستانی متحد ہوجائیں،میں بھی اپنے خلاف ہونے والی تمام مخالفت کو بھول چکا ہوں. اب ملک میں ایک ایسی حکومت آئے گی جس میں کسی کو سیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنایا جائے گا. تحریک انصاف کی حکومت اداروں کو مضبوط کرے گی، اور تمام لوگوں کے لیے مساوی قانون بنایا جائے گا. صرف اپوزیشن جماعتوں کے اراکین کا احتساب نہیں ہوگا، بلکہ تحریک انصاف اپنے لوگوں کا بھی احتساب کرکے مثال قائم کرے گی. ملک کا نظام بہتر کرکے بیرونِ ملک پاکستانیوں کو دعوت دی جائے گی کہ وہ ملک میں سرمایہ کاری کریں، کیونکہ پاکستان میں کرپشن کی وجہ سے یہ لوگ متحدہ عرب امارات یا دیگر ملکوں میں سرمایہ کاری کرتے ہیں ایک ملک کی پہچان یہ نہیں ہوتی کہ وہاں امیر کیسے رہتا ہے بلکہ ملک کی پہچان ایسے ہوتی ہے کہ وہاں غریب کیسے رہتا ہے. مدینہ کی ریاست پہلی فلاحی ریاست تھی، جہاں حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اصول قائم کیے تھے، ہماری کوشش ہوگی کہ پاکستان کو بھی انہی اصولوں پر لے کر آئیں.تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ مجھے شرم آئے گی کہ میرے عوام خط غربت سے نیچے زندگی گزاریں اور میں وزیرِاعظم ہاس میں رہوں. وزیراعظم ہاوس کو تجارتی مقصد کے لیے استعمال کیا جائے گا جس کی مدد سے پیسہ بنایا جائے گا اور مقامی عوام پر خرچ کیا جائے گا چھوٹے کاروبار میں مدد کی جائے گی اور نوجوانوں کو ہنر سکھایا جائے گا.پاکستان کی خارجہ پالیسی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ہم اپنی حکومت میں چین کے ساتھ اپنی دوستی کو مزید مضبوط کریں گے. چین پاکستان میں پاک چین اقتصادی راہداری(سی پیک)کے ذریعے سرمایہ کاری کر رہا ہے، اہم چین سے صرف اسی شعبے میں نہیں بلکہ غربت اور کرپش ختم کرنے کا طریقہ بھی سیکھیں گے. پاکستان پڑوسی ملک میں امن کا خواہاں ہے اور ملک میں امن کے لیے ہر ممکن کوشش کی جائے گی.میں چاہتا ہوں کہ پاکستان اور افغانستان کے درمیان ایسے تعلقات ہوں کے دونوں ممالک کے درمیان سرحد یورپی ممالک کی طرح کھلی سرحد بن جائے.میں جس شخصیت سے متاثر ہوں وہ نبی کریم ﷺ ہیں اور انہوں نے انسانیت کا ایسا نظام رائج کیا جس کی مثال دنیا میں نہیں ملتی. میں پاکستان کو ایسی فلاحی ریاست چاہتا ہوں جس طرح ہمارے نبی ﷺ نے بنائی تھی لیکن ہماری ریاست میں یہ نظام الٹا ہے جہاں آدھی سے زیادہ آبادی غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزار ہی ہے. ہمارے ملک میں ڈھائی کروڑ پاکستانی بچہ اسکولوں سے باہر ہے، دنیا میں سب سے زیادہ ہماری خواتین زچہ و بچہ کے مرحلے میں مر جاتی ہیں اور پینے کا صاف پانی نہ ملنے کے باعث دنیا میں سب سے زیادہ پاکستانی بچے مر جاتے ہیں. ملک میں ساری پالیسیاں کمزور طبقے اور غریب کسانوں کے لیے بنیں گی.انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہو گی کہ سب سے زیادہ پیسہ انساتی ترقی پر خرچ ہو کیونکہ کوئی بھی ملک ترقی نہیں کر سکتا جہاں ایک چھوٹا سا جزیزہ امیروں کا ہو اور غریبوں کا سمندر ہو.عمران خان نے کم وبیش وہی باتیں دہرائی ہیں جو وہ اسی سے قبل اپنے منشور میں کرچکے ہیں تاہم انہوں نے غریب طبقہ کے معاملات حل کرنے اور پاکستان کو مدینہ جیسی ریاست بنانے کا جو دعویٰ کیا ہے اللہ کرے کہ وہ اس میں کامیاب ہوں لیکن اس دوران انہیں کرپشن کا بادشاہوں چوروں لٹیروں قاتلوں جاگیرداروں خوابوں وغیرہ کی جانب سے خطرات کا سامنا کرنا پڑے گا یہ خطرات انتہائی جان لیوا بھی ہوسکتے ہیں .
 

..

ضرور پڑھیں: ’’تو یہ میرے لیڈر عمران خان کا خواب تھا کہ ۔ ۔ ۔‘‘ زرتاج گل نے ایوان صدر پہنچتے ہی ایسی بات کہہ دی کہ پی ٹی آئی کارکنان کیلئے جذبات پر قابو پانا مشکل ہوجائے گا