کپواڑہ میں تین شہید،بھارتی فوج کا کپواڑہ شہدا کی میتیں دینے اور شناخت جاری کرنے سے انکار،جھڑپوں میں6 زخمی  - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

کپواڑہ میں تین شہید،بھارتی فوج کا کپواڑہ شہدا کی میتیں دینے اور شناخت جاری کرنے سے انکار،جھڑپوں میں6 زخمی 


پائین شہر اور اننت ناگ میں پر تشدد احتجاج، پتھراؤ اور ٹئیرگیس شیلنگ ، تعلیمی ادارے بندہفتہ کو ہونے والے امتحانات ملتوی ،پولیس افسر بھی زخمیوں میں شامل ،ایک نوجوان کو گرفتار کر لیا گیا 
سرینگر(اے این این ) بھارتی فوج کا کپواڑہ میں گزشتہ روز شہید کئے گئے3نوجوانوں کی میتیں لوگوں کے سپرد کرنے اور ان کی شناخت جاری کرنے سے انکار،پائین شہر اور اننت ناگ میں پر تشدد احتجاج، پتھراؤ اور ٹئیرگیس شیلنگ ، تعلیمی ادارے بندہفتہ کو ہونے والے امتحانات ملتوی ،پولیس افسر سمیت 6افراد زخمی .تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز بھارتی فوج نے سر حدی ضلع کپوارہ کے ویلگام را محال میں تین نوجوانوں کی شہید کرنے کا دعویٰ کیا تھا اور ان پر دراندازی کا الزام عائد کیا تھا.

ضرور پڑھیں: علیم خان ، یاسر راجہ اور یاسمین راشد کی چھٹی! وزارت اعلیٰ پنجاب کیلئے تحریک انصاف کا مضبوط ترین امیدوار سامنے آگیا

ہفتہ کو کپواڑہ میں مقامی لوگوں نے فوجی کیمپ میں جا کر بھارتی فوجی حکام سے ملاقات کی اور میتوں کی حوالگی کا مطالبہ کیا تا کہ ان کی تدفین کی جا سکے تاہم بھارتی فوج نے نے صرف ایسا کرنے سے انکار کیا بلکہ شہداء کی شناخت جاری کرنے سے بھی انکار کیا جس پر لوگوں نے کیمپ کے باہر احتجاج کیا جو آخری اطلاعات تک جاری تھا .دریں اثناء پائین شہر کے نوہٹہ اوراننت ناگ میں نوجوانوں اور پولیس کے درمیان پرتشدد جھڑپوں کے دوران ایک پولیس افسر سمیت 6 افراد زخمی ہوئے .نماز جمعہ کے بعد جامع مسجد اور اس کے نواحی علاقوں میں احتجاج کے دوران پولیس اور فورسز کے درمیان جھڑپیں ہوئیں.عینی شاہدین کے مطابق میر واعظ کی قیادت میں جوں ہی احتجاجی مظاہرہ ختم ہوا،نوجوانوں پر مشتمل ایک گروپ نے پیش قدمی کرنے کی کوشش کی،تاہم پہلے سے موجود پولیس اور فورسز اہلکاروں نے انہیں آگے جانے کی اجازت نہیں دی،جس کے ساتھ ہی طرفین میں جھڑپیں شروع ہوئیں.عینی شاہدین کے مطابق نوجوانوں نے فورسز پر سنگبازی کی،جبکہ فورسز اور پولیس نے ٹیر گیس کے گولے

داغے.معلوم ہوا ہے کہ پولیس پر سخت خشت باری ہوئی،جبکہ فورسز نے پیلٹ کا استعمال بھی کیا. طرفین میں وقفے وقفے سے کافی دیر تک جھڑپوں کا سلسلہ جاری رہا.جنوبی کشمیر کے اننت ناگ ضلع میں بھی نماز جمعہ کے بعد پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپوں کی اطلاع موصول ہوئیں.نماز جمعہ کے بعد جامع مسجد اسلام آباد سے جلوس برآمد ہوا،جس کے بعد پولیس اور نوجوانوں کے مابین جھڑپیں شروع ہوئی.نمائندے کے مطابق احتجاجی مطاہرین نے نعرہ بازی کی،جس کے بعد ملک ناگ اور شیر پورہ میں سنگبازی و جوابی سنگبازی ہوئی.عینی شاہدین کا حوالہ دیتے ہوئے نامہ نگار نے بتایا کہ پولیس اور فورسز نیمظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے لاٹھی چارج بھی کیا،جبکہ ٹیر گیس کے گولے بھی داغے گئے،جبکہ جھڑپوں میں پولیس ایک ڈی ایس پی اور اہلکار زخمی ہوا. پولیس کاروائی میں2نوجوان زخمی ہوئے،جبکہ بتایا جاتا ہے کہ معراج الدین نامی ایک نوجوان کو حراست میں بھی لیا گیا.اس دوران کئی مزاحمتی لیڈروں کے گھروں پر جمعہ کی شام کو چھاپے مارے گئے.پولیس نے تحریک حریت کے سنیئر کارکن عمر عادل ڈار کو گھر سے گرفتار کر کے تھانہ نوگام میں نظر بند رکھا.دریں اثناء بھارتی وزیر اعظم ہند نریندر مودی کی وادی آمد پرمزاحمتی قیادت کی جانب سے آج لال چوک چلو کال کے پیش نظرحکام نے احتیاتی طور پر پائین شہر کے حساس علاقوں میں بندشیں عائد کرنے کا فیصلہ کیاہے. ذرائع کے مطابق صوبائی کمشنر کی صدارت میں منعقدہ میٹنگ کے دوران اس بات کا فیصلہ لیا گیا. ذرائع کے مطابق پائین شہر کے خانیار،رعناواری،نوہٹہ،مہاراج گنج، صفا کدل ،رعناواری اور نشاط پولیس تھانوں کے حدود میں مکمل بندشیں عائد رہیں گی،جبکہ مائسمہ اور کرالہ کھڈ کے کچھ علاقوں میں عارضی بندشیں عائد رہیں گی.اس دوران سرینگر کے تمام اسکولوں اور کالجوں میں بھی تدریسی عمل بند رہے گا.کشمیر یونیورسٹی نے19مئی کو منعقد ہونے والے تمام امتحانات کو ملتوی کردیا ہے. یونیورسٹی کی ایک اطلاع کے مطابق 19مئی2018یونیورسٹی کے تحت لئے جانے والے تمام امتحانات کو ملتوی کیا گیا جبکہ نئی تاریخوں کا اعلان بعد میں کیا جائے گا.جبکہ3جو 19تاریخ کو منعقد ہونے والا تھا ،کو ملتوی کر کے 27مئی بروز اتوار کو اپنے مقام پر دن کے گیارہ بجے لیا جائے گا.
 

..

ضرور پڑھیں: عمران خان کے وزیراعظم بنتے ہی احتساب شروع، اقتدار میں آتے ہی لوٹ مار کرنیوالوں کیخلاف کیا کرنیوالے ہیں؟بڑوں بڑوں کی شامت آگئی

مزید خبریں :