اپنا محاسبہ آپ - Daily Qudrat
Can't connect right now! retry

اپنا محاسبہ آپ


اسلام آباد (قدرت روزنامہ) بیان کیا جاتا ہے، ایک مسافر اتفاقاً خدا رسیدہ لوگوں کے حلقے میں پہنچ گیا اور ان کی اچھی صحبت سے اسے بہت زیادہ فائدہ پہنچا. اس کی بُری عادتیں چھوٹ گئیں اور نیکی میں لذت محسوس کرنے لگا. یہ انقلاب یقیناً بے حد خوش گوار تھا. لیکن حاسدوں اور بد خواہوں کے دلوں کو کون بدل سکتا ہے. اس شخص کے مخالفوں نے اس کے بارے میں مشہور کر دیا کہ اس کا نیکی کی طرف راغب ہو جانا تو محض دنیا کو دکھا نے کے لیے ہے. اس بات سے اسے بہت صدمہ پہنچا چنانچہ وہ ایک دن اپنے کی خدمت میں حاضر ہوا مرشد نے کہا کہ یہ تو بہت اچھی بات ہے کہ تیرے مخالف تجھے جیسا بتاتے ہیں، تو ویسانہیں. صدمے کی بات تو یہ ہوتی کہ تو اصلا برا ہوتا اور لوگ تجھے نیک اور شریف بتائے ؎شکر اس نعمت کا اس حال سے بہت ہے تومبتلا جس میں بتاتے ہیں تجھے تیرے حریف یہ کہیں بہتر ہے نیکی کر کے بد مشہور ہویہ تباہی

ہے کہ بد ہو اور تجھے سمجھیں شریفوضاحت :اس حکایت میںحضرت شیخ سعدی علیہ الرحمہ نے نہایت لطیف پیرائے میں اپنا محاسبہ آپ کرتے رہنے کی تعلیم دی ہے. اپنے بارے میں اہل دنیا کی رائے کو ہر گز قابل اعتبار نہیں سمجھنا چاہیے. یہاں تو اچھوں کو بڑا اور بڑوں کو اچھا کہنے کا رواج ہے اس کے علاوہ دوسری بہت ہی عمدہ بات یہ بتائی ہے کہ برائی کر کے اچھا مشہور کرنے کی خواہش کے مقابلے میں یہ بات ہر لحاظ سے مستحسن ہے کہ انسان اچھا ہو اور لوگ اسے برا خیال کریں

..

مزید خبریں :